اتوار ۵ فروری ۲۰۲۳ برابر ۱۴ رجب ۱۴۴۴ ہجری قمری ہے
منصور ہاشمی خراسانی
حضرت علّامہ منصور ہاشمی خراسانی حفظہ اللہ تعالی کے دفتر کے معلوماتی مرکز (ویب سایٹ) کا اردو زبان میں آغاز ہو گیا ہے۔
loading
خط
 

خط کا ترجمہ:

بسم اللہ الرّحمن الرّحیم

میں خدا کا شکر ادا کرتا ہوں کہ جس کے سوا کوئی اور خدا نہیں ہے؛ ایسا قاضی کہ جو ظلم نہیں کرتا، اور ایسا قدرت مند جو کبھی کمزور نہیں ہوتا، ایسا عالم جو کبھی کسی چیز سے بے خبر نہیں رہتا، اور ایسا بیدار جو کبھی نہیں سو تا، اور ایسا زندہ جو کبھی نہیں مرتا؛ وہ خدا کہ جس کی تعریف اسکی ذات سے ہے وہ ہر عیب اور کجی سے پاک ہے؛ وہ خدا جو اپنی ذات پر قائم ہے اور اپنی استقامت پر ہمیشہ باقی ہے؛ وہ خدا جو ظہور کی بلندی پر چھپا ہوا ہے اور ہزار پردوں کے پیچھے نمایاں ہے؛ وہ خدا جس نے زمین و آسمان اور اس کے درمیان کی ہر چیز کو چھ دنوں میں پیدا کیا تاکہ یہ اس کی ربوبیت پر دلیل رہے؛ وہ خدا جس نے فرشتوں کو اپنی رحمت اور قدرت سے پیدا کیا اور انہیں ستاروں اور سیاروں میں جگہ دی تاکہ وہ اس کی حمد و ثنا کریں اور اس کی خدمت کریں؛ وہ خدا جس نے انسان کو اپنی حکمت اور قدرت سے پیدا کیا اور اسے اپنے بہت سے فرشتوں پر فضیلت دی تا کہ وہ اسے پہچانے اور اسکی عبادت کرے۔ چنانچہ اس نے اسے اپنی جنت میں ٹھکانہ دیا اوراسے ہر نعمت سے مالامال کیا، یہاں تک کہ اس نے برتری حاصل کی اور نافرمان ہو گیا، لہذا اسے نا ہموار زمین پر چھوڑ دیا تاکہ وہ جنت کی قدر کو جان لے اور اطاعت کا سلیقہ سیکھے اور اس سے وعدہ لیا کہ جب بھی اس کے پاس اس کی طرف سے کوئی ہدایت آئے تو وہ اس پر عمل کرے تاکہ اسے کوئی غم اور خوف نہ ہو اور وہ گمراہ اور بدبخت نہ ہوسکے؛ جیسا کہ فرمایا: ﴿قُلْنَا اهْبِطُوا مِنْهَا جَمِيعًا ۖ فَإِمَّا يَأْتِيَنَّكُمْ مِنِّي هُدًى فَمَنْ تَبِعَ هُدَايَ فَلَا خَوْفٌ عَلَيْهِمْ وَلَا هُمْ يَحْزَنُونَ[۱]؛ «ہم نے کہا تم سب یہاں (جنّت ) سے نیچے اتر جاؤ، پھر اگر میری طرف سے کوئی ہدایت تم تک پہنچے تو جس جس نے میری ہدایت کی پیروی کی، پھر انہیں نہ تو کوئی خوف ہوگا اور نہ ہی وہ غمگین ہوں گے» اور فرمایا ہے: ﴿فَإِمَّا يَأْتِيَنَّكُمْ مِنِّي هُدًى فَمَنِ اتَّبَعَ هُدَايَ فَلَا يَضِلُّ وَلَا يَشْقَى[۲]؛ «تو جب بھی میری طرف سے کوئی ہدایت تم تک پہنچے تو جو میری ہدایت کی اتباع کرے گا وہ نہ گمراہ ہوگا اور نہ بدبخت» اور یہ وعدہ ہی وہ کنجی تھی جو خدا نے انسان کو نجات کے بند دروازے کھولنے اور نجات کے پہلے مقام تک پہنچانے کے لیے دی تھی۔ پھر اس ناہموار سرزمین میں ماؤں نے جنم دیا اور بچے پروان چڑھے اور نسل در نسل پروان چڑھے اور لوگ بڑھتے گئے اور پہاڑوں، صحراؤں، جنگلوں اور سمندروں میں بکھرتے گئے اور رفتہ رفتہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ اپنی تاریخ کو بھول گئے اور اپنے خالق کو اپنے ذہن سے مٹا دیا اور اپنے رشتہ داروں کو اندیکھا کر دیا اور بعض، بعض کے دشمن بن گئے؛ جیسا کہ خدا نے پہلے ہی خبردار کیا تھا اور کہا تھا: ﴿قَالَ اهْبِطُوا بَعْضُكُمْ لِبَعْضٍ عَدُوٌّ ۖ وَلَكُمْ فِي الْأَرْضِ مُسْتَقَرٌّ وَمَتَاعٌ إِلَى حِينٍ[۳]؛ «فرمایا (جنّت سے) نیچےاتر جاؤ! تم میں سے بعض بعض کے دشمن ہو جاؤ گے اور زمین میں تمہارے لیے ایک مدت تک قیام اور سامان زیست ہے»، لیکن وہ زمین میں اپنے فائدے کو دائمی سمجھ بیٹھے اور گمان کرتے تھے کہ وہ اپنے رب کی طرف لوٹ کر نہیں جائیں گے۔ پس بعض نے بعض پر برتری حاصل کی اور بعض نے بعض پر ظلم کیا، یہاں تک کہ سمندر اور خشکی ان کی تباہی سے بھر گئی؛ جیسا کہ اللہ نے فرمایا ہے: ﴿ظَهَرَ الْفَسَادُ فِي الْبَرِّ وَالْبَحْرِ بِمَا كَسَبَتْ أَيْدِي النَّاسِ[۴]؛ «لوگوں کے اپنے اعمال کے باعث خشکی اور سمندر میں فساد برپا ہو گیا»؛ کیونکہ ان میں سے بعض نے بعض کو قتل کیا اور بعض نے بعض کو غلام بنایا اور بعض نے بعض کو ملک سے نکال دیا اور بعض نے بعض کو لوٹ لیا اور اس طرح زمین ان کے ظلم سے بھر گئی۔

اس وقت، اللہ نے ان میں سے انبیاء کو چن لیا اور انہیں کھلی نشانیوں کے ساتھ انکے درمیان بھیجا اور ان کے ساتھ کتاب اور میزان نازل کی تاکہ لوگ ظلم سے باز آجائیں اور انصاف کے لئے اٹھ کھڑے ہوں؛ جیسا کہ فرمایا ہے: ﴿لَقَدْ أَرْسَلْنَا رُسُلَنَا بِالْبَيِّنَاتِ وَأَنْزَلْنَا مَعَهُمُ الْكِتَابَ وَالْمِيزَانَ لِيَقُومَ النَّاسُ بِالْقِسْطِ[۵]؛ «بتحقیق ہم نے اپنے رسولوں کو کھلی نشانیوں کے ساتھ بھیجا اور ان کے ساتھ کتاب اور میزان نازل کی تاکہ لوگ عدالت کے لئے اٹھ کھڑے ہوں» اور انبیاء کو بھیجنے کا مقصد بھی یہی تھا؛ چونکہ خدا خود عادل تھا لہذا اس نے دنیا کو عدل کی بنیاد پر بنایا اور اس بات پر راضی تھا کہ اس میں عدل ہمیشہ برقرار رہے؛ جیسا کہ فرمایا ہے: ﴿وَالسَّمَاءَ رَفَعَهَا وَوَضَعَ الْمِيزَانَ ۝ أَلَّا تَطْغَوْا فِي الْمِيزَانِ ۝ وَأَقِيمُوا الْوَزْنَ بِالْقِسْطِ وَلَا تُخْسِرُوا الْمِيزَانَ[۶]؛ «اور اسی نے اس آسمان کو بلند کیا اور میزان قائم کی؛ تاکہ تم ترازو کے ساتھ تولنے میں تجاوز نہ کرو؛ اور انصاف کے ساتھ وزن کو درست رکھو اور تول میں کمی نہ کرو»۔ چنانچہ اس نے انبیاء کو بھیجا کہ ان کو ظلم کے ساتھ پھانسی پر لٹکا دیں اور انہیں انصاف پر آمادہ کریں، اور اس نے لوہے کو بھیجا کہ وہ اسے اپنے ہاتھ میں لیں اور ان لوگوں سے لڑیں جو دنیا میں عدل نہ رہنے کی کوشش کرتے ہیں؛ جیسا کہ فرمایا: ﴿وَأَنْزَلْنَا الْحَدِيدَ فِيهِ بَأْسٌ شَدِيدٌ وَمَنَافِعُ لِلنَّاسِ[۷]؛ «اور ہم نے لوہا اتارا جس میں بڑی طاقت اور لوگوں کے لیے فائدے ہیں»۔ کیونکہ دنیا عدل کی بنیاد پر بنائی گئی ہے اور اسے انصاف کے سوا کسی چیز سے منظم نہیں کیا جا سکتا۔ ظلم بیشک دنیا کو تباہ کر دیتا ہے اور نظامِ خلقت کو درہم برہم کر دیتا ہے اور زمین کو تباہی کے کگار پر کھڑا کر دیتی ہے اور بیشک اللہ تعالیٰ نے دنیا والوں کے لیے کبھی ایسا نہیں چاہا؛ جیسا کہ اس نے فرمایا ہے: ﴿وَمَا اللَّهُ يُرِيدُ ظُلْمًا لِلْعَالَمِينَ[۸]؛ «خدا نے کبھی دنیا کے لیے ظلم نہیں چاہا»۔ پہلے دن سے ہی اس نے ہر چیز کے لیے ایک «مقدار» معین کیا ہے اور اسکی قدر کے مطابق ایک «مقام» مقرر کیا ہے، تاکہ وہ اس میں مقرر رہے اور اس سے باہر نہ جائے، جس سے فساد ہو؛ جیسا کہ فرمایا: ﴿قَدْ جَعَلَ اللَّهُ لِكُلِّ شَيْءٍ قَدْرًا[۹]؛ «بتحقیق اللہ نے ہر چیز کے لئے ایک اندازہ مقرر کیا ہے» اور فرمایا ہے: ﴿وَخَلَقَ كُلَّ شَيْءٍ فَقَدَّرَهُ تَقْدِيرًا[۱۰]؛ «اور جس نے ہر چیز کو خلق فرمایا پھر ہر ایک کو اپنے اندازے میں مقدر فرمایا» اور فرمایا ہے: ﴿إِنَّا كُلَّ شَيْءٍ خَلَقْنَاهُ بِقَدَرٍ[۱۱]؛ «ہم نے ہر چیز کو ایک اندازے کے مطابق پیدا کیا ہے» اور ہر چیز کےاندازہ کے مطابق ایک استعداد ہے جو خدا نے اس کے لیے رکھی ہے لہذا عدل یہ ہے کہ ہر چیز اپنی قدر کو جان لے اور اسے اس جگہ پر رکھا جائے جو خدا نے اس کے لیے قرار دیا ہے اور ظلم یہ ہے کہ کوئی چیز اپنی قدر نہ جانے اور اپنے حدود سے خارج ہو کر اس جگہ رکھ دی جائے جو خدا نے اسکے لئے قرار نہیں دیا ہے، اور فساد، ظلم کی اولاد ہے۔ چنانچہ اللہ تعالیٰ نے اپنے نبیوں کو بھیجا تاکہ وہ انہیں ان کی قدریں یاد دلائیں تاکہ لوگ اپنی قدر و قیمت جان سکیں اور اپنا مقام حاصل کرسکیں اور اس مقام پر رہیں جو اللہ تعالیٰ نے ان میں سے ہر ایک کے لیے مقرر کیا ہے اور اپنے مقام سے باہر نہ آجائیں۔ اور کسی دوسرے کی جگہ نہ لیں جو ان کے مقدر میں نہ ہو اور ایسا کرکے ایک دوسرے پر ظلم نہ کریں اور زمین میں فساد نہ کریں۔ چنانچہ انبیاء نے خدا کے حکم سے لوگوں کو ان کی قدر و منزلت سے کہ جو ان کی صلاحیتیں تھیں آشنا کرایا، اور انہیں عدالت کی طرف بلایا اور انہیں ظلم سے روکا، تاکہ وہ زمین پر اپنی جگہ بھر لیں اور بعض، بعض کی جگہ نہ لیں اور اپنی صلاحیتوں کا استعمال کریں اور دوسروں کو انکی صلاحیت کے استعمال سے نہ روکیں، اور اسی طرح سب اپنا کمال حاصل کریں اور دنیا ظلم سے بھر جانے کے بعد انصاف سے بالکل اسی طرح بھر جائے۔

چنانچہ انبیاء یکے بعد دیگرے ہدایت اور واضح نشانیوں کے ساتھ آئے اور ہر قوم سے اس کی زبان میں گفتگو کی اور اس وسیع زمین کے چاروں کونوں میں پہاڑوں، بیابانوں، جنگلوں اور سمندروں سے «عدالت» کی آواز بلند کی اور اپنی زبانوں اور ہاتھوں کو «ظلم» سے بچایا، لیکن اکثر لوگ، جو جلاوطنی کے دن خدا کے عہد کو بھول گئے تھے اور نجات کی کنجی کھو چکے تھے، ان کا انکار کیا اور ان کی پکار پر لبیک نہ کہا؛ کیونکہ وہ اپنی قدر نہیں جانتے تھے اور اپنے مقام سے مطمئن نہیں تھے، اور بعض، بعض پر برتری چاہتے تھے، اور وہ ظلم اور فساد سے مانوس تھے، اور وہ زمین پر اپنے بزرگوں کی پیروی کرتے تھے، اور ان کے بزرگ کی یہ کوشش تھی کہ وہ پیغمبر کو روی زمیں سے اٹھا دیں؛ کیونکہ وہ جانتے تھے کہ وہ دوسروں کی جگہ بیٹھے ہیں اور اگر وہ عدل کے تابع ہونگے تو انہیں جہاں وہ بیٹھے ہیں وہاں سے اٹھنا پڑ جائے گا اور جن کو خدا نے بڑا بنایا ہے انہیں اپنی جگہ سونپنی پڑ جائےگی؛ جو زمین میں چھوٹے شمار کیے گئے ہیں اور ان پر ظلم کیا گیا! اس لیے خدا کی طرف سے کوئی نبی نہیں آیا مگر یہ کہ لوگوں کے بزرگوں نے اسکی تکذیب کی اور اس کے سامنے کھڑے ہو ئے تاکہ وہ اور آگے نہ بڑھ پائیں؛ جیسا کہ فرمایا ہے: ﴿وَمَا أَرْسَلْنَا فِي قَرْيَةٍ مِنْ نَذِيرٍ إِلَّا قَالَ مُتْرَفُوهَا إِنَّا بِمَا أُرْسِلْتُمْ بِهِ كَافِرُونَ[۱۲]؛ «اور ہم نے کسی سر زمین پر کسی تنبیہ کرنے والے کو نہیں بھیجا مگر یہ کہ وہاں کے بزرگ لوگ کہتے تھے: جو پیغام تم لے کر آئے ہو ہم اسے نہیں مانتے» اور خدا کی قسم جس چیز کے لیے ڈرانے والے بھیجے گئے تھے وہ «عدالت» تھی جو زمین کے بزرگوں نے نہیں دکھایا؛ کیونکہ عدالت ہمیشہ متکبروں کے نقصان اور مظلوموں کے فائدے کے لیے رہی ہے اور عدالت انہیں نیچے اور ان کو بلند کرتی رہی ہے! چنانچہ انہوں نے بعض کے سر قلم کئے، بعض کو جلا دیا، بعض کو بھوکے شیروں کے سامنے ڈال دیا، بعض کو اونچے پہاڑ سے پھینکا، بعض کو زمین سے نکال دیا اور یہ سب اس لئے ہوا کہ وہ عدل و انصاف کی رعایت نہیں کرتے تھے اور اس کے قیام سے ڈرتے تھے! یہاں تک کہ حضرت نوح علیہ السلام نے ساڑھے نو سو سال تک انہیں دعوت دی اور اس دعوت پر صرف اسّی لوگوں نے لبیک کہا، اور ان میں سے آٹھ ان کے خاندان سے ہی تھے، اور رو داد یہ کہ بنی اسرائیل نے طلوع آفتاب تک ایک ہی رات میں ستر پیغمبروں کو قتل کر دیا اور پھر وہ اپنے کاروبار میں واپس لوٹ آئے اور کھجور بیچنے والے آواز لگانے لگے: کھجور! کھجور!

اس طرح ایک کے بعد ایک انبیاء آتے گئے اور لوگوں کو انصاف کی طرف بلایا اور جھٹلائے گئے اور ظلم کا شکار ہوئے، یہاں تک کہ محمّد صلّی اللہ علیہ و آلہ و سلّم کہ جو آخری نبی اور گذشتہ تمام انبیاء کے وارث ہیں کی باری آئی۔ خدا نے انہیں ایسے وقت میں بھیجا جب مدتوں سے کوئی نبی نہیں آیا تھا اور نہ کوئی وحی نازل ہوئی تھی؛ مقدس کتابوں میں تحریف اور اچھی سنتیں تبدیل ہو چکی تھی؛ نجات کی راہیں چھپ گئیں تھی اور ہدایت کے جھنڈے سرنگون ہو گئے تھے؛ لوگ بتوں کی پوجا کرنے لگے تھے اور وہموں اور توہمات کے اندھیروں میں کھو گئے تھے؛ وہ جاہلیت میں رہتے تھے اور جاہلیت میں مرتے تھے؛ وہ اپنی قدر نہیں جانتے تھے اور ایک دوسرے پر ظلم کیا کرتے تھے۔ ایسے خوفناک وقت میں اللہ نے اپنے نبی کا انتخاب کیا اور اپنی کتاب ان پر نازل کی۔ اس نے اپنے رب کے مشن کو بھی صحیح طریقے سے انجام دیا اور اس طرح صبر سے کام لیا؛ اس نے انصاف کا پیغام پہنچایا جو اسے سونپا گیا تھا اور اس انصاف پر عمل شروع کیا جس کا اسے حکم دیا گیا تھا؛ جیسا کہ فرمایا ہے: ﴿قُلْ أَمَرَ رَبِّي بِالْقِسْطِ[۱۳]؛ «کہو کہ میرے رب نے عدل کا حکم دیا ہے» اور فرمایا ہے: ﴿وَأُمِرْتُ لِأَعْدِلَ بَيْنَكُمُ[۱۴]؛ «اور مجھے حکم دیا گیا ہے کہ میں تم میں انصاف قائم کروں»۔ چنانچہ اس نے عدالت کی دعوت دی اور اسے لوگوں میں نافذ کرنے کی کوشش کی، لیکن مکہ کے کافروں نے اس کی پکار پر لبیک نہ کہا اور مدینہ کے منافقین نے اس کی کوششیں ضائع کردیں، یہاں تک کہ خدا نے اس کے لیے اپنا جوار پسند کیا اور اس کی پاکیزہ روح کو اپنے پاس بلا لیا اور انہیں گذشتہ انبیاء کی روحوں سے ملحق کر دیا؛ ﴿إِنَّا لِلَّهِ وَإِنَّا إِلَيْهِ رَاجِعُونَ۔ تاہم، یہ سلسلہ نبوت کا خاتمہ اور وحی کے دروازے کا بند ہونا تھا، لیکن خدا کی غیر متغیر سنت اس بات پر مبنی تھی کہ اپنی زمین کو ایک دن کے لیے بھی خلیفہ کے بغیر نہ چھوڑے جو اس میں انصاف کو ممکن بنائے؛ جیسا کہ اس نے فرمایا ہے: ﴿إِنِّي جَاعِلٌ فِي الْأَرْضِ خَلِيفَةً[۱۵]؛ «میں زمین میں ایک خلیفہ بنانے والا ہوں»! اس لیے اس نے اپنے نبی کو لوگوں میں سے اس وقت تک نہیں بلایا جب تک کہ اس کے بعد کسی کو اسکی جگہ پر مقرر نہ کر دیا اور لوگوں کو ان کی تقدیر اور مقام سے آگاہ کر دیا تاکہ وہ ان کے بعد عدل و انصاف کے مظہر اور اس پر عمل کرنے والے ہوں تاکہ وہ اس کے کام کو مکمل کر سکیں اور اسکی کوششیں کامیاب ہو سکیں، اور یہ لوگ وہی اہل بیت اور عترت رسول ہیں کہ جنکی پاکیزگی کی گواہی خود خدا نے دی ہے اور انکی محبت کو اپنے بندوں پر فرض کیا ہے اس نے انکے متعلق فرمایا ہے: ﴿إِنَّمَا يُرِيدُ اللَّهُ لِيُذْهِبَ عَنْكُمُ الرِّجْسَ أَهْلَ الْبَيْتِ وَيُطَهِّرَكُمْ تَطْهِيرًا[۱۶]؛ «اللہ کا ارادہ بس یہی ہے ہر طرح کی ناپاکی کو آپ اہل بیت ا سے دور رکھے اور آپ کو ایسے پاکیزہ رکھے جیسے پاکیزہ رکھنے کا حق ہے» اور فرمایا: ﴿قُلْ لَا أَسْأَلُكُمْ عَلَيْهِ أَجْرًا إِلَّا الْمَوَدَّةَ فِي الْقُرْبَى[۱۷]؛ «کہہ دیجئے کہ میں تم سے کوئی اجر نہیں چاہتا مگر یہ کہ تم میرے قرابت داروں سے مودت اختیار کرو»، جب کہ اس نے فرمایا: ﴿قُلْ لَا أَسْأَلُكُمْ عَلَيْهِ أَجْرًا ۖ إِنْ هُوَ إِلَّا ذِكْرَى لِلْعَالَمِينَ[۱۸]؛ «کہ دیجئے میں اس پر تم سے کوئی اجر نہیں مانگتا، یہ تو عالمین کے لیے فقط ایک نصیحت ہے» اور فرمایا: ﴿قُلْ مَا أَسْأَلُكُمْ عَلَيْهِ مِنْ أَجْرٍ إِلَّا مَنْ شَاءَ أَنْ يَتَّخِذَ إِلَى رَبِّهِ سَبِيلًا[۱۹]؛ «کہدیجئے اس کام پر میں تم سے کوئی اجرت نہیں چاہتا مگر یہ کہ جو چاہے وہ اپنے رب کا راستہ اختیار کر لے»! اس لیے اس نے ان کی مودت کو تمام جہان والوں کے لیے نصیحت اور اپنی طرف جانے کا راستہ بنایا ہے اور تمام نجاستوں سے ان کی پاکیزگی کو ان کا سہارا بنایا ہے، تاکہ وہ اپنے نبی کے بعد بندوں کی آزمائش کرے جیسا کہ اس سے پہلے اس نے ان کا امتحان لیا، تاکہ وہ جان لے کہ ان میں سے کس نے اس کے حکم کی تعمیل کی ہے اور کون اس کے نافرمان ہیں اور جو اس کے حکم کی تعمیل کرتا ہے وہ خود اسکے فائدے کے لیے ہے۔ جیسا کہ فرمایا ہے: ﴿قُلْ مَا سَأَلْتُكُمْ مِنْ أَجْرٍ فَهُوَ لَكُمْ[۲۰]؛ «کہ دیجئے کہ جو اجرت میں نے تم سے مانگی ہے وہ خود تمہارے ہی لئے ہے»!

درحقیقت زمین پر خدا کے خلیفہ وہ ہیں جنہیں ہر چیز کی اس کے مقام کی حد تک رہنمائی کی گئی ہے اور ہر طرح کے ظلم سے پاک کیا گیا ہے، تاکہ وہ اس میں ہر چیز کو اپنی پاکیزگی کی بنیاد پر اس مقام پر رکھ سکےجو خدا نے اس کے لیے معین کیا ہے، تاکہ وہ انصاف کرے اور انکے درمیان سے ظلم ختم کرے؛ جیسا کہ اللہ نے فرمایا ہے: ﴿وَمِمَّنْ خَلَقْنَا أُمَّةٌ يَهْدُونَ بِالْحَقِّ وَبِهِ يَعْدِلُونَ[۲۱]؛ «اور جن کو ہم نے پیدا کیا ہے ان میں سے کچھ ایسے بھی ہیں جو حق کی طرف رہنمائی کرتے ہیں اور ان کے ساتھ عدالت سے کام کرتے ہیں» اور وہ درحقیقت پیغمبر کے اہل بیت ہیں جنہوں نے لوگوں کو ان کی قدر و منزلت سے آگاہ کیا اور ان کے مقام کی نشاندہی کرائی اور اپنی وفات سے پہلے انکے متعلق فرمایا ہے: «أَيُّهَا النَّاسُ إِنِّي أُوشَكُ أَنْ أُدْعَى فَأُجِيبَ وَإِنِّي مَسْؤُولٌ وَأَنْتُمْ مَسْؤُولُونَ فَإِنِّي تَارِكٌ فِيكُمْ خَلِيفَتَيْنِ كِتَابَ اللَّهِ وَعِتْرَتِي أَهْلَ بَيْتِي إِنْ تَمَسَّكْتُمْ بِهِمَا لَنْ تَضِلُّوا بَعْدِي فَانْظُرُوا كَيْفَ تَخْلُفُونِي فِيهِمَا وَإِنَّهُمَا لَنْ يَفْتَرِقَا حَتَّى يَرِدَا عَلَيَّ الْحَوْضَ نَبَّأَنِي بِذَلِكَ اللَّطِيفُ الْخَبِيرُ»؛ «اے لوگو ں! میں بلایا جانے والا ہوں، لہذا مجھے جانا ہوگا، جب کہ میں مسؤول ہوں اور تم بھی مسؤول ہو؛ پس میں تم میں دو خلیفہ چھوڑے جا رہا ہوں: خدا کی کتاب اور میرے اہل بیت، اگر تم ان سے متمسک رہو گے تو میرے بعد کبھی گمراہ نہیں ہو گے، لہٰذا خیال رہے کہ تم میرے بعد ان کے ساتھ کیا کرتے ہو، وہ دونوں کبھی جدا نہیں ہوں گے یہاں تک کہ وہ حوض کوثر پر مجھ سے ملاقات کریں گے، باخبر مبصر نے مجھے اس کے بارے میں آگاہ کیا ہے»! لیکن افسوس، جب انہیں خدا کی طرف بلایا گیا تو انہوں نے لبیک کہا، ان میں سے اکثر ان دونوں سے متمسک نہیں رہے؛ کیونکہ وہ سمجھتے تھے کہ ان کے لیے کتاب اللہ ہی کافی ہے اور انہیں عترت اور آل رسول کی ضرورت نہیں ہے! چنانچہ انہوں نے عترت اور اس کے خاندان کی اہمیت کو بھلا کر ان کی جگہ لے لی اور یہیں سے امت کی گمراہی کا آغاز ہوا اور ان کی بدبختی کا سیلاب شروع ہوا؟! کیا خدا نے اپنی کتاب میں ان سے یہ عہد نہیں کیا تھا کہ وہ اس کی ہدایت پر عمل کریں تاکہ وہ بدبخت نہ ہوں؟! اور کیا اس کے نبی نے اپنی سنت میں ان سے یہ عہد نہیں کیا تھا کہ وہ کتاب خدا اور اس کے اہل بیت سے متمسک رہیں تاکہ وہ گمراہ نہ ہوں؟! تو کیا ہوا کہ وہ خدا کے وعدے کو بھول گئے اور اس کے نبی کے وعدے کی خلاف ورزی کی؟! اس میں کوئی شک نہیں کہ وہ ظالم تھے۔

اس کے بعد یہ قوم اُس آوارہ ریوڑ کی مانند ہو گئی جو اپنا چرواہا کھو بیٹھی ہے اور بھیڑیے نہ جانے کس طرف سے اسے پھاڑنا شروع کر دیں! لوگ اندھیروں میں پڑ گئے اور گروہ در گروہ مذہب سے منہ موڑ گئے۔ سنتوں کو بھلا دیا گیا اور تباہ کن بدعتیں رونما ہوئیں۔ نوجوان اسلام کو اُلٹا پہنا ہوا چمڑے کے لباس کی طرح تبدیل کر دیا گیا، یہاں تک کہ لوگ اپنی اصل جہالت کی طرف لوٹ گئے اور جاہلیت کی مردہ رسموں کو زندہ کر دیا۔ انہوں نے حسن کو صلح اور حسین کو جنگ پر مجبور کیا اور حسین کے پاک اولادوں کو یکے بعد دیگرے قتل کیا جو عادلانہ کا حکم دیتے تھے اور ان کی جگہ ان لوگوں کو لایا گیا جو اس کی اہمیت تک نہیں جانتے تھے۔ جیسا کہ انہوں نے خدا کا یہ فرمان سنا ہی نہ ہو: ﴿إِنَّ الَّذِينَ يَكْفُرُونَ بِآيَاتِ اللَّهِ وَيَقْتُلُونَ النَّبِيِّينَ بِغَيْرِ حَقٍّ وَيَقْتُلُونَ الَّذِينَ يَأْمُرُونَ بِالْقِسْطِ مِنَ النَّاسِ فَبَشِّرْهُمْ بِعَذَابٍ أَلِيمٍ ۝ أُولَئِكَ الَّذِينَ حَبِطَتْ أَعْمَالُهُمْ فِي الدُّنْيَا وَالْـآخِرَةِ وَمَا لَهُمْ مِنْ نَاصِرِينَ[۲۲]؛ «جو لوگ اللہ کی آیات کا انکار کرتے ہیں اور انبیاء کو ناحق قتل کرتے ہیں اور لوگوں میں سے انصاف کا حکم دینے والوں کو بھی قتل کرتے ہیں انہیں دردناک عذاب کی خوش خبری سنا دیں۔ ایسے لوگوں کے اعمال دنیا و آخرت میں برباد ہو گئے اور انکا کوئی مددگار نہیں»۔

پھر نتیجہ یہ ہوا کہ ظالموں کے بعد ظالم اور بدکاروں کے بعد بدکار اور فاسقوں کے بعد فاسق اور بدعتیوں کے بعد بدعتوں نے امت پر قبضہ کر لیا اور ان میں سے ہر ایک نے انکے مال و جان کو ایک حد تک اپنے قبضے میں لے لیا اور ان میں سے کسی نے بھی عترت اور اہل بیت پیغمبر کے اماموں کو یہ موقع نہیں دیا کہ وہ اپنے دونوں پاؤں اپنی جگہ پر جمائیں رکھیں اور مظلوم کے سوکھے منھ کو انصاف کے پیمانہ سے پانی پلائیں! ان میں سے ہر ایک نے اپنے لیے شریعت کو بنایا اور ایک چال سے اس کے لیے بہانہ بنایا اور پھر اقتدار کے رتھ پر سوار ہو کر قوم کے اول و آخر پر سوار ہو کر دینِ خدا کو تباہی کی کھنڈر میں پھینک دیا، اور اس دوران جاہل لوگ جنہوں نے ہمیشہ اپنی جہالت کی بھاری قیمت ادا کی، انہوں نے بعض ظالموں کی دوسروں کے خلاف مدد کی اور ظالم حکومت کی جگہ ایک جابر حکومت قائم کی؛ جیسا کہ فرمایا ہے: ﴿وَكَذَلِكَ نُوَلِّي بَعْضَ الظَّالِمِينَ بَعْضًا بِمَا كَانُوا يَكْسِبُونَ[۲۳]؛ «اور اس طرح ہم ظالموں کو ان کے ان کرتوتوں کی وجہ سے جو وہ کر رہے ہیں ایک دوسرے پر مسلط کریں گے»!

یہاں تک کہ مہدی کی باری آئی اور قیامت قریب آگئی اور دل سخت ہوگئے۔ چنانچہ اللہ تعالیٰ نے اپنے بندوں میں سے ایک بندے کو اس جگہ سے اٹھایا جہاں سے سورج نکلتا ہے، اچھی حکمت اور نصیحت کے ساتھ کہ انہیں اپنا عہد یاد دلائے اور انہیں زمین پر موجود اہل بیت و عترت پیغمبر میں سے خلیفہ کی طرف بلائے، تاکہ وہ واپس آجائیں۔ اور میں وہی بندہ ہوں۔ لہذا میری دعوت پر لبیک کہو اور مہدی کی طرف لوٹ آؤ، تاکہ تمہارے گناہ معاف ہو جائیں اور تمہارے معاملات اس دن سے پہلے حل ہو جائیں جو عاد، ثمود اور قوم نوح پر نازل ہوا۔

﴿وَالسَّلَامُ عَلَى مَنِ اتَّبَعَ الْهُدَى[۲۴]

↑[۱] . البقرہ/ ۳۸
↑[۲] . طہ/ ۱۲۳
↑[۳] . الاعراف/ ۲۴
↑[۴] . الروم/ ۴۱
↑[۵] . الحدید/ ۲۵
↑[۶] . الرحمن/ ۷-۹
↑[۷] . الحدید/ ۲۵
↑[۸] . آل عمران/ ۱۰۸
↑[۹] . الطلاق/ ۳
↑[۱۰] . الفرقان/ ۲
↑[۱۱] . القمر/ ۴۹
↑[۱۲] . سبا/ ۳۴
↑[۱۳] . الاعراف/ ۲۹
↑[۱۴] . الشوری/ ۱۵
↑[۱۵] . البقرہ/ ۳۰
↑[۱۶] . الاحزاب/ ۳۳
↑[۱۷] . الشوری/ ۲۳
↑[۱۸] . الانعام/ ۹۰
↑[۱۹] . الفرقان/ ۵۷
↑[۲۰] . سبا/ ۴۷
↑[۲۱] . الاعراف/ ۱۸۱
↑[۲۲] . آل عمران/ ۲۱-۲۲
↑[۲۳] . الانعام/ ۱۲۹
↑[۲۴] . طہ/ ۴۷
اصلی زبان میں خط کا مطالعہ کرنے کے لۓ یہاں کلیک کریں۔
ھم آہنگی
ان مطالب کو آپ اپنے دوستوں کے ساتھ بھی شیئر کریں تاکہ دینی معلومات کو پھیلانے میں مدد ملے۔ نئی چیز سیکھنے کا شکر دوسروں کو وہی چیز سکھانے میں ہے۔
ایمیل
ٹیلیگرام
فیسبک
ٹویٹر
اس متن کا نیچے دی ہوئ زبانوں میں بھی مطالعہ کر سکتے ہیں
اگر دوسری زبان سے واقفیت رکھتے ہیں تو اِس متن کا اُس زبان میں ترجمہ کر سکتے ہیں۔ [ترجمے کا فارم]